The Himalayas

! اے ہمالہ اے فصیلِ کشورِ ہندوستاں چُومتا ہے تیری پیشانی کو جھُک کر آسماں تجھ میں کُچھ پیدا نہیں دیرینہ روزی کے نشاں تُو

The Colourful Rose

گُلِ رنگیں تُو شناسائے خراشِ عُقدۂ مشکل نہیں اے گُلِ رنگیں ترے پہلو میں شاید دل نہیں زیبِ محفل ہے، شریکِ شورشِ محفل نہیں یہ

Two Planets

دوستارے آئے جو قِراں میں دو ستارے کہنے لگا ایک، دوسرے سے یہ وصل مدام ہو تو کیا خوب انجامِ خرام ہو تو کیا خوب

The Royal Cemetery

گورستانِ شاہی آسماں، بادل کا پہنے خرقۂ دیرینہ ہے کچھ مکدّر سا جبینِ ماہ کا آئینہ ہے چاندنی پھیکی ہے اس نظّارۂ خاموش میں صُبحِ

The Star

ستارہ قمر کا خوف کہ ہے خطرۂ سحَر تجھ کو مآلِ حُسن کی کیا مِل گئی خبر تجھ کو؟ متاعِ نُور کے لُٹ جانے کا