Tadmin on a Verse of Anisi Shamlu

تضمین بر شعرِ انیسی شاملوؔ

ہمیشہ صورتِ بادِ سحَر آوارہ رہتا ہوں
محبّت میں ہے منزل سے بھی خوشتر جادہ پیمائی
دلِ بے تاب جا پہنچا دیارِ پیرِ سنجر میں
میسّر ہے جہاں درمانِ دردِ ناشکیبائی
ابھی ناآشنائے لب تھا حرفِ آرزو میرا
زباں ہونے کو تھی منّت پذیرِ تابِ گویائی
یہ مرقد سے صدا آئی، حرم کے رہنے والوں کو
شکایت تجھ سے ہے اے تارکِ آئینِ آبائی!
ترا اے قیس کیونکر ہوگیا سوزِ درُوں ٹھنڈا
کہ لیلیٰ میں تو ہیں اب تک وہی اندازِ لیلائی
نہ تخمِ ’لا الہ‘ تیری زمینِ شور سے پھُوٹا
زمانے بھر میں رُسوا ہے تری فطرت کی نازائی
تجھے معلوم ہے غافل کہ تیری زندگی کیا ہے
کُنِشتی ساز، معمورِ نوا ہائے کلیسائی
ہُوئی ہے تربیت آغوشِ بیت اللہ میں تیری
دلِ شوریدہ ہے لیکن صنم خانے کا سودائی
“وفا آموختی از ما، بکارِ دیگراں کر دی
ربودی گوہرے از ما نثارِ دیگراں کر دی”

0:00
0:00